نئی بھارتی فلم کے خلاف فردوس عاشق اعوان کا بیان

مضمون شئیر کریں:

معاون خصوصی اطلاعات ونشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ بھارتی فلم پانی پت میں احمد شاہ ابدالی کے کردار کو جس طرح مسخ کیا گیا وہ افغان عوام اور مسلمانوں کے بارے میں ان کی ذہنیت کو ظاہر کرتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے اپنے حالیہ ٹویٹ میں کہا کہ بابری مسجد کی شہادت کے دن اس فلم کو ریلیز کرنا آر ایس ایس کے فاشٹ نظریے کا ثبوت ہے، بھارتی فلم پانی پت میں احمد شاہ ابدالی کے کردار کو جس طرح مسخ کیا گیا وہ افغان عوام اور مسلمانوں کے بارے میں ان کی ذہنیت کو ظاہر کرتا ہے۔

14 جنوری 1761 کو پانی پت کے مقام پر لڑی جانے والی تیسری جنگ سے متعلق بالی ووڈ کی نئی متنازعہ فلم ’’پانی پت‘‘میں افغان جرنیل احمد شاہ ابدالی کی شخصیت کو مجروح کیا گیا ہے اور نئی نسل کو یہ بتانے کی کوشش کی ہے کہ مرہٹوں نے احمد شاہ ابدالی کو شکست دے دی تھی، ان کی فوج ہلاک ہو گئی تھی اور وہ شکست کھا گئے تھے، وہ جابر اور حملہ آور تھے۔ اس فلم کے خلاف افغانستان سمیت بھارت کے اندر سے بھی آوازیں اٹھ رہی ہیں جبکہ کئی افغان رہنماؤں نے بھی سوشل میڈیا پر فلم ساز سے وضاحت مانگتے ہوئے اپنی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ اس فلم پر بھارت سے باضابطہ احتجاج کیا جائے۔


مضمون شئیر کریں:
مزید پڑھیں:  پاکستان میں تیل و گیس کے نئے ذخائر دریافت

اپنا تبصرہ بھیجیں